poetry on sham

  1. Maria-Noor

    Ghazal Ham na dunya ke hain na deen ke hain By Imran Ul Haq

    عمران الحق چوہان ہم نہ دنیا کے ہیں نہ دیں کے ہیں ہم تو اک زلف عنبریں کے ہیں شیشہ و مے سے بے نیاز ہیں ہم مست اس چشم سرمگیں کے ہیں رنگ ہو روشنی ہو یا خوشبو سب میں پرتو اسی حسیں کے ہ چشم بے خواب دامن گلگوں سب کرشمے اسی ذہیں کے ہیں ہیں مکیں قریۂ محبت کے آسماں کے نہ ہم زمیں کے ہیں آئے تھے شہر...
  2. Maria Hussain J

    Ashaar Yaad hai ab tak tujh se bichadne ki wo andheri sham mujhe

    Yaad hai ab tak tujh se bichadne ki wo andheri sham mujhe Tu khamosh khada tha lekin baatein karta tha kaajal Nasir Kazmi
  3. Ustad

    Ghazal Aandhi mein Charagh jal rahe hain by Akhtar Hoshiyarpuri

    aandhi mein charagh jal rahe hain kya log hawa mein pal rahe hain ai jalti ruto gawah rahna hum nange panw chal rahe hain kohsaron pe barf jab se pighli dariya tewar badal rahe hain miTTi mein abhi nami bahut hai paimane hunuz Dhal rahe hain kah de koi ja ke taeron se chyunTi ke bhi par...
  4. Maria Hussain J

    Ghazal Chor kar hamein kar gaya heran wo

  5. Maria-Noor

    Ghazal Naram Fiza ki karweten dil ko dikha ke reh gaiin

    نرم فضا کی کروٹیں دل کو دکھا کے رہ گئیں ٹھنڈی ہوائیں بھی تری یاد دلا کے رہ گئیں شام بھی تھی دھواں دھواں حسن بھی تھا اداس اداس دل کو کئی کہانیاں یاد سی آ کے رہ گئیں مجھ کو خراب کر گئیں نیم نگاہیاں تری مجھ سے حیات و موت بھی آنکھیں چرا کے رہ گئیں حسن نظر فریب میں کس کو کلام تھا مگر تیری ادائیں...
  6. Maria-Noor

    Ghazal Shafq jo roaye Sehar par galal malne lagi

    شفق جو روئے سحر پر گلال ملنے لگی یہ بستیوں کی فضا کیوں دھواں اگلنے لگی اسی لئے تو ہوا رو پڑی درختوں میں ابھی میں کھل نہ سکا تھا کہ رت بدلنے لگی اتر کے ناؤ سے بھی کب سفر تمام ہوا زمیں پہ پاؤں دھرا تو زمین چلنے لگی کسی کا جسم اگر چھو لیا خیال میں بھی تو پور پور مری مثل شمع جلنے لگی مری نگاہ...
  7. Maria-Noor

    Nazm Chai ka cup

    چائے کا کپ اور تم اور میں شام کہ سائے اور تم اور میں گلاب کی پھول اور تم اور میں تیرا ہاتھ میرا ہاتھ اور تم اور میں انگوٹھی اور خوشبو اور تم اور میں آنے والے دنوں کے خواب اور میں اور تم حنا شیخ
  8. Maria-Noor

    Ghazal Wo khafa hai to na aaye kabhi chai peene

    وہ خفا ہے تو نہ آئے کبھی چائے پینے اور اگر خوش ہے تو آئے ابھی چائے پینے ایک تالاب تھا کچھ پیڑ تھے اور تنہائی میں جہاں شام ڈھلے جاتی تھی چائے پینے اب تو اک عمر ہوئی آیا نہیں ہرجائی وہ جو آتا تھا مرے گھر کبھی چائے پینے صبح کا ہاتھ پکڑ کر کبھی دستک دے گی دیکھنا آئے گی تیرہ شبی چائے پینے میں...
  9. Maria-Noor

    Ghazal Is ne ek shaam bula kar jo pilai chai

    اس نے اک شام بلا کر جو پلائی چائے مجھکو میٹھی لگی اس ہاتھ کی پھیکی چائے اس طرح لمس لیا اسکے لبوں کا میں نے پی گیا اسکی، مزے لے کے میں جوٹھی چائے بن گئی تھی اسی اک لمحے میں وہ چائے شراب مسکرائی تھی وہ، جب اس نے مجھے دی تھی چائے کبھی سگریٹ جلادیتا ھے انگلی میری اسکی یادیں کبھی کردیتی ہیں ٹھنڈی...
  10. Asad Rehman

    Ghazal Laila e Shab e Hijer ne Bikhra diye Gesu By Yagan Changaizi

    محروم شہادت کی ہے کچھ تجھ کو خبر بھی او دشمن جاں دیکھ ذرا پھر کے ادھر بھی ہے جان کے ساتھ اور اک ایمان کا ڈر بھی وہ شوخ کہیں دیکھ نہ لے مڑ کے ادھر بھی وہ ہم سے نہیں ملتے ہم ان سے نہیں ملتے اک ناز دل آویز ادھر بھی ہے ادھر بھی ٹھنڈا ہو کلیجا مرا اس آہ سحر سے جب دل کی طرح جلنے لگے غیر کا...
Top
AdBlock Detected
Your browser is blocking advertisements. We're strongly asking to disable ad blocker while you're browsing in Pakistan.web.pk. You may not be aware but any visitor supports our site by just viewing and visiting ads.

آپ کے ویب براؤزر میں ایڈ بلاکر انسٹال ہے، مہربانی کرکے اسے پاکستان ویب پر ڈس ایبل رکھیں ۔ شاید آپ کو معلوم نہ ہو مگر سپانسر اشتہارات کو دیکھ کر ہی آپ پاکستان ویب کو سپورٹ کرتے ہیں۔ سپانسر اشتہارات سے ویب سائٹ کے اخراجات ادا کرنے میں تھوڑی سی ہی سہی مگر مدد ملتی ہے، اس لئے ابھی اپنے براؤزر کی آپشنز میں جاکر ایڈ بلاکر بند کر دیں، شکریہ

I've Disabled AdBlock    No Thanks