Baqraat Aur Wabaen By Malik Mushtaq

intelligent086

intelligent086

Star Pakistani
7,019
12,451
981
بقراط اور وبائیں ....... تحریر : ملک اشفاق

Buqraat.jpg

وبائیں انسانی آبادی کو صدیوں سے اپنا ہدف بنا رہی ہیں۔ یہ کئی قدیم سلطنتوں کی تباہی کا سبب بنیں اور انہوں نے کئی اہم شہروں کو برباد اور ویران کر دیا۔ علم محدود ہونے کی وجہ سے دورقدیم کا انسان انہیں پوری طرح سمجھ نہیں پایا اور اس نے انہیں بہت سی مافوق الفطرت چیزوں سے منسوب بھی کیا۔ کسی انسان سے بھی بعض اوقات ایسی باتیں منسوب کر لی جاتی ہیں جن کا حقیقت سے تعلق نہیں ہوتا۔ آج بھی ہمیں ایک وبا کا سامنا ہے۔ سائنسی ترقی کے باعث ہم اس وبا کو سمجھ چکے ہیں، اس کے باوجود ہمیں اس سے نپٹنے میں مشکل درپیش ہے۔
ہزاروں سال قبل بقراط نے اپنے علم، مشاہدے، تجربے اور سخت محنت سے دریافت کر لیا تھا کہ کچھ بیماریاں ایسی ہوتی ہیں جو کسی علاقے میں بہت تیزی سے پھیلتی ہیں اور اس طرح ایک شخص سے دوسرے کو بہت جلدی متاثر کر دیتی ہیں۔
ایسی بیماریوں میں طاعون، جس کو کالی موت کہا جاتا تھا، بلکہ اب بھی کہا جاتا ہے، بہت ہی تیزی سے پھیلتی ہے اور ایک دن میں ہزاروں، لاکھوں انسانوں کی موت کا باعث بن سکتی ہے۔ اسی طرح ہیضہ، چیچک، جذام، خناق اور متعدی بخار وغیرہ وبائی امراض کے زمرے میں آتے ہیں۔ بقراط نے ان وبائی امراض کو دریافت کر کے ان کے علاج بھی تجویز کیے۔
بقراط ایک ذہین اور بابغہ روزگار طبیب تھا۔ اس نے طبی دنیا میں زبردست انقلاب برپا کیا اور اس کے طریقہ علاج اور ضابطہ اخلاق نے دائمی شہرت حاصل کی۔
بقراط کی ذاتی زندگی کے متعلق بہت سی کہانیاں منسوب ہیں، ان میں سے زیادہ تر کہانیاں سچی نہیں ہیں کیونکہ تاریخی حوالے سے ان کی کوئی شہادت نہیں ملتی۔
بقراط نے شاندار زندگی بسر کی اور وہ اپنی زندگی میں ہی بقراط عظیم کہلایا جبکہ اس کی زندگی سے کئی غیرمعمولی کہانیاں وابستہ کر دی گئی ہیں۔ بقراط کے متعلق ایک غیر معمولی کہانی وابستہ ہے کہ جب ایتھنز میں طاعون کی وبا پھیل گئی تو بقراط نے پورے شہر میں آگ کے بڑے بڑے الاؤ جلا کر شہر سے طاعون کی بیماری کے جراثیموں کو ختم کر دیا یعنی ڈِس انفیکٹ کر دیا جبکہ تاریخی حوالے سے ایسے کوئی شواہد نہیں ملتے۔
بقراط سے منسوب ایک دوسری کہانی ہے کہ مقدونیہ کا بادشاہ پریڈیکس ایک ایسی بیماری میں مبتلا تھا کہ اس بیماری کی سمجھ کسی طبیب کو نہ آتی تھی۔ لیکن بقراط نے اس کی نبض پر ہاتھ رکھ کر بتا دیا کہ بادشاہ محبت کی بیماری (لَو سِکنس) میں مبتلا ہے اور اس طرح بادشاہ کی مطلوبہ محبوبہ سے شادی کر کے اس کو تندرست کر دیا۔ اس کہانی کے بھی کوئی تاریخی شواہد نہیں ہیں، بلکہ یہ کہانی بقراط سے بلاوجہ منسوب کر دی گئی ہے۔
تیسری کہانی ایران کے شہنشاہ کے متعلق ہے کہ شہنشاہ آردشیر نے بقراط کو ایران بلوایا، بہت سا مال و دولت بقراط کو بھجوایا کہ وہ ایران آ کر ایرانی شہریوں کا علاج کرے لیکن اس نے ایران کے شہنشاہ کی درخواست کو ٹھکرا دیا اور ایران نہ گیا۔ یہ کہانی بھی تاریخی شواہد سے خالی ہے اور اس کی کوئی ٹھوس بنیاد نہیں ہے۔
چوتھی کہانی جو بقراط سے منسوب کی جاتی ہے اس کا تعلق عظیم سائنس دان اور فلسفی ڈیماکریٹس سے ہے۔ کہا جاتا ہے کہ ڈیماکریٹس کو عادت تھی کہ وہ ہر کسی کے ساتھ ہنس کر بات کیا کرتا تھا اور اسے ہنسنے کی بیماری تھی۔
ڈیماکریٹس کو کسی نے مشورہ دیا کہ تم جا کر بقراط سے اپنی بے تکی ہنسی کا علاج کراؤ۔
ڈیماکریٹس جب بقراط کے پاس گیا تو بقراط نے اس کو ایسا سنجیدہ کر دیا کہ وہ ہنسنے کے بجائے اداس رہنے لگا۔
اس حد تک تو بات صحیح ہے کہ ڈیماکریٹس کو آج بھی ہنستا ہوا فلسفی یا لافنگ فلاسفر کہا جاتا ہے لیکن اس نے کبھی بقراط سے اپنی ہنسی کا علاج کروایا ہو، ایسی کوئی شہادت تاریخ میں نہیں ملتی جبکہ ہنسنا اور خوش رہنا کوئی بیماری ہی نہیں ہے۔
پانچویں کہانی بقراط کی موت کے بعد اس کی قبر سے منسوب ہے۔ جالینوس جو کہ بقراط کا بہت زیادہ مداح اور شارح ہے، اس نے بیان کیا ہے کہ بقراط کی قبر پر شہد کا چھتا تھا، جو کوئی مریض خواہ کسی بھی مرض میں مبتلا ہوتا، اس شہد کے چھتے سے شہد کھا لیتا تو اس کی بیماری فوراً ختم ہو جاتی۔
اس کہانی کے بھی کوئی تاریخی شواہد نہیں ملتے بلکہ یہ کہانی عقیدت کے طور پر بقراط سے وابستہ کر دی گئی ہے۔
چھٹی کہانی بھی اس کی موت کے بعد اس سے منسوب کی گئی۔ جالینوس نے اس کہانی کو بیان کرتے ہوئے کہا کہ بقراط نے اپنی موت سے کچھ دیر پہلے ہاتھی دانت کا خوبصورت بند ڈبہ اپنے شاگردوں کو دیا اور وصیت کی کہ اس ڈبے کو بھی اس کی میت کے ساتھ قبر میں دفن کر دیا جائے۔ وہ ہاتھی دانت کا بنا ہوا ڈبہ بھی اس کی قبر میں اس کے ساتھ دفن کر دیا گیا۔ ایک عرصہ گزر جانے کے بعد اتفاق سے قیصر روم کا گزر بقراط کی قبر کے قریب سے ہوا۔ اس وقت قبر بہت ہی خستہ حال ہو چکی تھی۔ قیصرروم کو جب بتایا گیا کہ یہ قبر عظیم طبیب بقراط کی ہے تو قیصر روم نے حکم دیا کہ قبر کو دوبارہ بقراط کے شایانِ شان تعمیر کیا جائے۔ جب قبر کی تعمیر کے لیے بنیادیں کھودی جا رہی تھیں تو کھدائی کرنے والا کوئی ایک خوبصورت منقش ہاتھی دانت کا ڈبہ ملا جو کہ بند تھا۔ جب وہ ہاتھی دانت کا بنا ہوا ڈبہ قیصر روم کو دکھایا گیا تو اس نے اسے کھولنے کا حکم دیا۔ جب ڈبہ کھولا گیا تو اس میں ایک کتاب تھی، جس میں 25 ایسے امراض لکھے ہوئے تھے جن کے بارے میں معلوم ہو جاتا تھا کہ مریض کتنے دنوں کے بعد مرجائے گا۔
یہ کہانی بھی بے معنی ہے اور تاریخی لحاظ سے اس کا کوئی ثبوت نہیں ہے۔ بقراط کے متعلق ایک کہانی اس کے پہلے سوانح نگار سورانوس نے بھی بیان کی ہے۔
سورانوس کا کہنا ہے کہ یونان میں ایک شفائی مندر (ہِیلنگ ٹمپل) تھا۔ اس مندر کو بقراط نے ایک دن آگ لگوا دی اور وہاں سے چلا گیا۔ یہ مندر کنڈوس میں واقع بھی۔ جبکہ بقراط ایک دوسرا سوانح نگار ٹیزیٹزس کہتا ہے کہ یہ بقراط کا آبائی مندر تھا اور اس کے اپنے شہر کوس میں واقع تھا۔ لیکن دونوں نے اس مندر کو آگ لگانے کی کوئی وجہ بیان نہیں کی۔
بقراط کے متعلق یہ تمام کہانیاں اس کو ایک لیجنڈ بنانے میں اہم کردار ادا کرتی ہیں جبکہ بقراط کے شاندار کام جو کہ انسانیت کی فلاح کے لیے ہیں، اس کو عظیم بنانے کے لیے کافی ہیں۔​
 

Maria-Noor

Maria-Noor

Popular Pakistani
I Love Reading
4,059
6,408
456
۔ آج بھی ہمیں ایک وبا کا سامنا ہے۔ سائنسی ترقی کے باعث ہم اس وبا کو سمجھ چکے ہیں، اس کے باوجود ہمیں اس سے نپٹنے میں مشکل درپیش ہے۔
میرا اختلاف ہے
ابھی تک ہم سائنس اور ترقی کے دائرے سے باہر نہیں آئے کچھ سمجھ نہیں آیا اس ٹیکنالوجی اور مادیت پرستی سے ہٹ کر اللہ اور اس کے آفاقی پیغام کے سپرد کر کے اس کی منشا کے مطابق قرآن و سنت پر عمل پیرا ہونے کی ضرورت ہے......مزید اس صورت میں تحریر کروں جب کسی نے جواب دینا ہو
 
Maria-Noor

Maria-Noor

Popular Pakistani
I Love Reading
4,059
6,408
456
۔
ہزاروں سال قبل بقراط نے اپنے علم، مشاہدے، تجربے اور سخت محنت سے دریافت کر لیا تھا کہ کچھ بیماریاں ایسی ہوتی ہیں جو کسی علاقے میں بہت تیزی سے پھیلتی ہیں اور اس طرح ایک شخص سے دوسرے کو بہت جلدی متاثر کر دیتی ہیں۔
ایسی بیماریوں میں طاعون، جس کو کالی موت کہا جاتا تھا، بلکہ اب بھی کہا جاتا ہے، بہت ہی تیزی سے پھیلتی ہے اور ایک دن میں ہزاروں، لاکھوں انسانوں کی موت کا باعث بن سکتی ہے۔ اسی طرح ہیضہ، چیچک، جذام، خناق اور متعدی بخار وغیرہ وبائی امراض کے زمرے میں آتے ہیں۔ بقراط نے ان وبائی امراض کو دریافت کر کے ان کے علاج بھی تجویز کیے۔
بقراط ایک ذہین اور بابغہ روزگار طبیب تھا۔ اس نے طبی دنیا میں زبردست انقلاب برپا کیا اور اس کے طریقہ علاج اور ضابطہ اخلاق نے دائمی شہرت حاصل کی
بالکل اس کے بارے میں پڑھنے کو ملا ہے لیکن مسلمان سائنسدانوں نے سائنس میں جو انقلاب برپا کیا اس کو منظر عام پر کیوں نہیں آنے دیا جاتا مسلمان اطباء کی گراں قدر خدمات کو خراج تحسین پیش کرنے کی بجائے غیر مسلم سائنسدانوں کے قصبے سنائے جاتے ہیں........ لکھنے کا فائدہ پڑھے گا کون
 
Maria-Noor

Maria-Noor

Popular Pakistani
I Love Reading
4,059
6,408
456
۔
بقراط سے منسوب ایک دوسری کہانی ہے کہ مقدونیہ کا بادشاہ پریڈیکس ایک ایسی بیماری میں مبتلا تھا کہ اس بیماری کی سمجھ کسی طبیب کو نہ آتی تھی۔ لیکن بقراط نے اس کی نبض پر ہاتھ رکھ کر بتا دیا کہ بادشاہ محبت کی بیماری (لَو سِکنس) میں مبتلا ہے اور اس طرح بادشاہ کی مطلوبہ محبوبہ سے شادی کر کے اس کو تندرست کر دیا۔ اس کہانی کے بھی کوئی تاریخی شواہد نہیں ہیں، بلکہ یہ کہانی بقراط سے بلاوجہ منسوب کر دی گئی ہے۔
یہ قصہ بو علی سینا کا ہے تاریخ طب میں درج ہے لیکن... ۔...... پڑھے گا کون
 
intelligent086

intelligent086

Star Pakistani
7,019
12,451
981
میرا اختلاف ہے
ابھی تک ہم سائنس اور ترقی کے دائرے سے باہر نہیں آئے کچھ سمجھ نہیں آیا اس ٹیکنالوجی اور مادیت پرستی سے ہٹ کر اللہ اور اس کے آفاقی پیغام کے سپرد کر کے اس کی منشا کے مطابق قرآن و سنت پر عمل پیرا ہونے کی ضرورت ہے......مزید اس صورت میں تحریر کروں جب کسی نے جواب دینا ہو
بے شک درست تحریر فرمایا ۔۔۔۔۔۔
باقی
ہماری طرف سے جواب ہی سمجھو :laugh:۔​
 
Muhammad Farooq Sadiq

Muhammad Farooq Sadiq

Well-Known Pakistani
357
778
116
میرا اختلاف ہے
ابھی تک ہم سائنس اور ترقی کے دائرے سے باہر نہیں آئے کچھ سمجھ نہیں آیا اس ٹیکنالوجی اور مادیت پرستی سے ہٹ کر اللہ اور اس کے آفاقی پیغام کے سپرد کر کے اس کی منشا کے مطابق قرآن و سنت پر عمل پیرا ہونے کی ضرورت ہے......مزید اس صورت میں تحریر کروں جب کسی نے جواب دینا ہو
👌😍
 

Create an account or login to comment

You must be a member in order to leave a comment

Create account

Create an account on our community. It's easy!

Log in

Already have an account? Log in here.

Similar threads

intelligent086
Replies
11
Views
106
intelligent086
intelligent086
intelligent086
    • Like
  • intelligent086
  • 18
  • 109
2
Replies
18
Views
109
intelligent086
intelligent086
intelligent086
Replies
7
Views
72
intelligent086
intelligent086
intelligent086
    • Like
  • intelligent086
  • 5
  • 75
Replies
5
Views
75
intelligent086
intelligent086
Ajwah
Replies
4
Views
55
intelligent086
intelligent086
Top
AdBlock Detected
Your browser is blocking advertisements. We're strongly asking to disable ad blocker while you're browsing in Pakistan.web.pk. You may not be aware but any visitor supports our site by just viewing and visiting ads.

آپ کے ویب براؤزر میں ایڈ بلاکر انسٹال ہے، مہربانی کرکے اسے پاکستان ویب پر ڈس ایبل رکھیں ۔ شاید آپ کو معلوم نہ ہو مگر سپانسر اشتہارات کو دیکھ کر ہی آپ پاکستان ویب کو سپورٹ کرتے ہیں۔ سپانسر اشتہارات سے ویب سائٹ کے اخراجات ادا کرنے میں تھوڑی سی ہی سہی مگر مدد ملتی ہے، اس لئے ابھی اپنے براؤزر کی آپشنز میں جاکر ایڈ بلاکر بند کر دیں، شکریہ

I've Disabled AdBlock    No Thanks