1. intelligent086
    9

    intelligent086 Popular Pakistani

    بستیاں ویران تھیں احباب غائب تھے مرے
    ہنس غائب تھے مرے تالاب غائب تھے مرے
    رہ گیا تھا زندگی سے نام کا رشتہ مرا
    روح زخمی تھی مری ، اعصاب غائب تھے مرے
    صرف پیڑوں تک نہ تھی محدود ویرانی مری
    جھاڑیوں سے جھانکتے سرخاب غائب تھے مرے
    خاک پر سروصنوبر کو ترستی تھی نظر
    آسماں سے انجم و مہتاب غائب تھے مرے
    کوئی پڑھتا بھی تو کیا مجھ آیت۔مسمار کو
    حرف غائب تھے مرے اعراب غائب تھے مرے
    پھٹ گیا تھا شدت ۔وحشت سے سینہ خاک کا
    اور اس میں خوش بدن احباب غائب تھے مرے
    میرے چہرے میں گڑے تھے وقت کے ناخن بڑے
    آنکھ چھیدوں سے بھری تھی خواب غائب تھے مرے​
     
    Tags:
    Maria-Noor likes this.
  2. intelligent086
    9

    intelligent086 Popular Pakistani

  3. Maria-Noor
    8

    Maria-Noor Popular Pakistani I Love Reading

    @intelligent086
    بہت عمدہ انتخاب
    شیئر کرنے کا شکریہ
     
    intelligent086 likes this.
  4. intelligent086
    9

    intelligent086 Popular Pakistani

    @Maria-Noor
    پسند اور رائے کا شکریہ
     
    Maria-Noor likes this.
Loading...