1. Ustad
    0

    Ustad New Member

    ‏خبرِ تحیرِ عشق سن، نہ جنوں رہا، نہ پری رہی
    نہ تو تُو رہا، نہ تو میں رہا، جو رہی سو بے خبری رہی

    چلی سمتِ غیب سے اک ہوا کہ چمن ظہور کا جل گیا
    مگر ایک شاخِ نہالِ غم جسے دل کہیں سو ہری رہی

    نظرِ تغافلِ یار کا گلہ کس زباں سے کروں بیاں
    شرابِ حسرت و آرزو، خمِ دل میں تھی سو بھری رہی
     
    Tags:
    Saad Sheikh likes this.
Loading...