Ghar per Bachon ki Tazleel unhein Jhagralu banati hai

Saad Sheikh

Saad Sheikh

Founder
Staff member
4,792
13,895
456
گھر پر بچوں کی تذلیل و توہین انہیں جھگڑالو بناتی ہے، تحقیق

respectlittlekids.jpg


مونٹریال: ’’اگر آپ چاہتے ہیں کہ آپ کے بچے تمیز دار اور باادب بنیں تو ان کے ساتھ شفقت سے پیش آئیے، اور محبت سے بات کیجیے۔‘‘ صدیوں پرانی یہ نصیحت ایک بار پھر سے ایک نئے روپ میں ہمارے سامنے آئی ہے۔

امریکا اور کینیڈا کے نفسیاتی ماہرین نے ایک مشترکہ تحقیق میں 13 سے 15 سال عمر کے 1,400 سے زائد بچوں کا جائزہ لے کر یہ نتیجہ اخذ کیا ہے کہ جن بچوں کے والدین اور بڑے ان کے ساتھ اکثر توہین آمیز رویہ رکھتے ہیں، انہیں طنز کا نشانہ بناتے ہیں اور ان کی تذلیل کرتے رہتے ہیں، وہ بچے گھر سے باہر کی دنیا میں انتہائی جھگڑالو بن جاتے ہیں اور بدتمیزی، بدکلامی، گالم گلوچ اور مار پیٹ تک ان کے روزمرہ معمولات کا حصہ بن جاتی ہیں۔

اس وجہ سے ایک طرف تو وہ دوسروں کے ساتھ مار پیٹ کرتے ہیں تو خود بھی دوسروں سے مار کھاتے ہیں۔ یہی چیز آگے چل کر ان کی شخصیت میں عدم اعتدال کو جنم دیتی ہے اور بڑے ہونے پر وہ تشدد پسند اور مجرمانہ ذہنیت کے حامل بھی بن سکتے ہیں۔
13 سے 19 سال کی عمر کو ’’نو بلوغت‘‘ بھی کہا جاتا ہے کیونکہ اس دوران ایک بچہ اپنے بچپن کو خیرباد کہہ کر جوانی میں قدم رکھ رہا ہوتا ہے۔ ذہنی و جسمانی نشوونما کے اعتبار سے یہ عمر کسی بچے کےلیے خاص طور پر اہم ترین ہوتی ہے کیونکہ اس عمر میں جو اثرات بھی شخصیت پر مرتب ہوتے ہیں، وہ بالعموم مرتے دم تک کسی نہ کسی صورت برقرار رہتے ہیں۔

یہ مطالعہ فلوریڈا اٹلانٹک یونیورسٹی کے ڈاکٹر بریٹ لارسن اور کونکورڈیا یونیورسٹی مونٹریال کے ڈاکٹر ڈینیئل ڈکسن کی سربراہی میں انجام دیا گیا، جس سے معلوم ہوا کہ بچوں پر سختی کرکے انہیں نظم و ضبط کا پابند بنانے اور سختی کے نام پر بچوں کے ساتھ توہین آمیز سلوک کرنے کے اثرات میں بہت فرق ہے۔

اگر بچوں کو ڈسپلن سکھانے کےلیے ان پر اس طرح سے سختی کی جائے کہ انہیں اپنے بڑوں سے کوئی خوف نہ ہو اور نہ ہی وہ اپنی توہین محسوس کریں، تو اس عمل کے اثرات مثبت نکلتے ہیں۔ اس کے برعکس، اگر بچوں کو گالیاں دے کر، ان پر طنز کرکے، ان کی توہین کرکے یا انہیں طعنے دے کر ’’تمیز‘‘ سکھائی جائے تو اس کے اثرات الٹ نکلتے ہیں جو بچے کے اندر غصہ پیدا کرتے ہیں جس کا اظہار وہ اپنے گھر کے بڑوں کے سامنے نہیں کرسکتا۔ اسی لیے گھر میں تذلیل و توہین کا نشانہ بننے والے بچے اپنی ساری بھڑاس باہر نکالتے ہیں جو اکثر اوقات اپنے ہم عمر دوستوں کے ساتھ گالم گلوچ اور مار پیٹ کی صورت میں ہوتی ہے۔ یہی چیز آگے چل کر انہیں جرائم پیشہ اور تشدد پسند مزاج کا حامل بنا دیتی ہیں۔

اس تحقیق کی روشنی میں ماہرین کا مشورہ بھی بہت آسان اور قابلِ فہم ہے: بچے کی تربیت کیجیے لیکن اس کی عزتِ نفس مجروح نہ کیجیے، ورنہ آپ بچے کی شخصیت بنانے کے بجائے اسے تباہ کردیں گے۔

مذکورہ بالا تحقیق کے نتائج تحقیقی مجلے ’’جرنل آف یوتھ اینڈ ایڈولیسینس‘‘ کے تازہ شمارے میں شائع ہوئے ہیں۔
 

Ellaf khan

Ellaf khan

New Member
I Love Reading
Invalid Email
2,718
4,281
406
@Saad Sheikh
Thank u for sharing. interesting and Informative post.
:thumbs up animated::thumbs up animated:
 
Falak

Falak

Super Star Pakistani
I Love Reading
10,759
19,005
1,226
  • No Longer a Newbie
  • I Survived a Month!
  • Happy Anniversary!
  • Graduate Poster
  • Experienced
  • Posting expert
  • Fast and Furious
  • Can't Get Enough of Your Stuff
@Saad Sheikh...agree...When we talk about disrespectful children, we must look at parenting. Solid parenting shows children respect and empathy. When a parent truly gives respect to a child, they receive it back. When this becomes the norm for the household, we see young people grow up with a loving value system that makes a difference in the world. However, when children are shamed, humiliated and then silenced, it represses the harm that may re-surface later in life. If this happens, it can be in the form of self-destruction or cruelty to others.
 
intelligent086

intelligent086

Star Pakistani
7,471
14,558
981
@Saad Sheikh
معلومات شیئر کرنے کا شکریہ​
 
Maria-Noor

Maria-Noor

Popular Pakistani
I Love Reading
4,263
7,425
456
@Saad Sheikh
ماشاءاللہ
بہت عمدہ انتخاب
شیئر کرنے کا شکریہ​
 

Create an account or login to comment

You must be a member in order to leave a comment

Create account

Create an account on our community. It's easy!

Log in

Already have an account? Log in here.

Similar threads

Saad Sheikh
    • Like
    • Love
    • Wow
  • Saad Sheikh
  • 9
  • 113
Replies
9
Views
113
sahrish khan
sahrish khan
intelligent086
    • Like
  • intelligent086
  • 9
  • 55
Replies
9
Views
55
intelligent086
intelligent086
intelligent086
Replies
5
Views
119
intelligent086
intelligent086
Saad Sheikh
    • Like
  • Saad Sheikh
  • 7
  • 176
Replies
7
Views
176
Maria-Noor
Maria-Noor
intelligent086
Replies
12
Views
111
intelligent086
intelligent086
Top
AdBlock Detected
Your browser is blocking advertisements. We're strongly asking to disable ad blocker while you're browsing in Pakistan.web.pk. You may not be aware but any visitor supports our site by just viewing and visiting ads.

آپ کے ویب براؤزر میں ایڈ بلاکر انسٹال ہے، مہربانی کرکے اسے پاکستان ویب پر ڈس ایبل رکھیں ۔ شاید آپ کو معلوم نہ ہو مگر سپانسر اشتہارات کو دیکھ کر ہی آپ پاکستان ویب کو سپورٹ کرتے ہیں۔ سپانسر اشتہارات سے ویب سائٹ کے اخراجات ادا کرنے میں تھوڑی سی ہی سہی مگر مدد ملتی ہے، اس لئے ابھی اپنے براؤزر کی آپشنز میں جاکر ایڈ بلاکر بند کر دیں، شکریہ

I've Disabled AdBlock    No Thanks