Quran Khulasa e Quran Khulasa e Quran Para #29 By Ibtisam Elahi Zaheer

intelligent086

intelligent086

Star Pakistani
5,164
7,510
881
انتیسویں پارے کا خلاصہ .... علامہ ابتسام الہی ظہیر

#29.png

انتیسویں پارے کا آغاز سورہ ملک سے ہوتا ہے ۔سورہ ملک میں اللہ تعالیٰ نے اپنی ذات کے بارے میں ارشاد فرمایا کہ بابرکت ہے ‘وہ ذات جس کے ہاتھ میں حکومت ہے اور وہ ہر چیز پر قادر ہے۔ اللہ تبارک و تعالیٰ فرماتے ہیں کہ انہوں نے زندگی اور موت کو اس لیے بنایا‘ تا کہ وہ جان لیں کہ کون اچھے عمل کرتا ہے ۔اللہ تبارک و تعالیٰ نے اپنی قوت تخلیق کا ذکر کرتے ہوئے ارشادفرمایا کہ اس نے سات آسمان بنائے اور اس نے اس انداز میں ان کو بنایا کہ اس کی تخلیق میں کسی بھی قسم کی کوئی کمزوری نظر نہیں آتی ۔اللہ تبارک و تعالیٰ فرماتے ہیں کہ انہوں نے آسمان دنیا کو چراغوں سے مزین کیا اور ان کے ذریعے وہ شیطان کو رجم بھی کرتے ہیں ۔
سورہ ملک کے بعد سورۃ القلم ہے ۔سورۃ القلم میں اللہ تعالیٰ نے اس امر کا ذکر فرمایا کہ رسول اللہ ﷺ کا اخلاق عظیم ہے ۔ رسول کریم ﷺ نے خود بھی اعلان فرمایا تھا کہ مجھے مکارم اخلاق کی تکمیل کے لیے مبعوث کیا گیا ہے۔کسی نے حضرت عائشہ رضی اللہ عنہاسے پوچھا کہ رسول اللہ ﷺ کا اخلاق کیسا تھا تو حضرت عائشہ رضی اللہ عنہانے جواب دیا کہ آپ ﷺ کا اخلاق قرآن تھا ‘یعنی جو کچھ قرآن میں اللہ تبارک و تعالیٰ نے آپﷺ پر نازل فرمایا‘ آپ ﷺ ساری زندگی اسی پر عمل پیرا رہے ۔
اس سورت میں اللہ تعالیٰ نے ایک سخی اور نیک زمیندار کا بھی ذکر کیا کہ وہ اپنے باغات کی آمدنی میں سے اللہ تعالیٰ کے حق کو احسن طریقے سے ادا کیا کرتا تھا ۔ جب اس کا انتقال ہوا تو اس کے بیٹوں نے اس بات کا فیصلہ کیا کہ وہ فصلوں کی کٹائی میں سے کسی بھی غریب کو کچھ بھی ادا نہ کریں گے ۔جب فصلوں کی کٹائی کا وقت آیا تو وہ صبح سویرے نکلے‘ تاکہ راستے میں ان کو کوئی مسکین نہ مل جائے جب وہ باغ میں پہنچے تو کیا دیکھاکہ وہاں پر کھیت یا باغ نام کی کوئی چیز موجود نہ تھی‘ ان کو شک ہوا کہ وہ راستہ بھول گئے ہیں‘ لیکن اچھی طرح غور کرنے کے بعد وہ سمجھ گئے کہ وہ راستہ نہیں بھولے‘ بلکہ ان کا باغ اجڑ چکا تھا ۔
یہ واقعہ اس امر کی دلیل ہے کہ جب مال کو راہ خدا میں خرچ نہ کیا جائے تو اس مال کے ضائع ہونے کے امکانات پیدا ہو جاتے ہیں اس سورت میں اللہ تعالیٰ نے بتلایا کہ کافر رسول کریم ﷺ کو اچھی نظر سے نہیں دیکھتے تھے۔ جب وہ قرآن پاک کو سنتے تو نعوذ باللہ آپ کو مجنون کہتے۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ وہ آپ ﷺ کو اپنی نگاہوں سے گرانا چاہتے ہیں‘ اس لیے آپ کے بارے میں ہرزہ سرائی کرتے ہیں؛ حالانکہ حقیقت یہ ہے کہ یہ قرآن مجید جہانوں کے لیے نصیحت ہے۔
سورۃ القلم کے بعد سورۃ الحاقہ ہے اور الحاقہ سے مراد حقیقت ہے ۔اللہ تعالیٰ نے اس سورت میں قیامت کو حقیقت کے نام سے پکارا ہے اور اس حقیقی کھڑکھڑاہٹ کو جھٹلانے والوں کے انجام سے آگاہ کیا۔ اس سورت میں قومِ ثمود اور عاد کے انجام سے آگاہ کیا‘ جنہوں نے قیامت کو جھٹلایا تھا۔ اللہ تبارک و تعالیٰ نے قوم ثمود کو ایک چیخ کے ذریعے اور قوم عاد کو تیز ہوا کے ذریعے ہلاک کر دیا تھا ۔ اس سورت میں اللہ تبارک و تعالیٰ نے نبی ﷺکے بارے میں کافروں کے اقوال کو نقل کر کے ان کی تردید کی ہے ۔کافررسول اللہ ﷺ کو شاعر اور کاہن کہتے تھے ‘جبکہ ا ﷲتعالیٰ فرماتے ہیں ‘جو کچھ بھی آپ پر اترا ہے‘ پروردگار عالم نے اتارا ہے اور اس میں جھوٹ والی کوئی بات نہیں ۔اللہ تعالیٰ اپنی ذات پر جھوٹ باندھنے والے کو کبھی فلاح نہیں دیتے ‘جبکہ اللہ کے حبیب ﷺ کے تذکروں کو اللہ تعالیٰ نے رہتی دنیا تک جاری و ساری فرمادیا ہے ۔
سورۃ الحاقہ کے بعد سورۃ المعارج ہے ۔اس سورت میں اللہ تعالیٰ نے قیامت کے دن کا ذکر کیا ہے کہ اس کی طوالت پچاس ہزار برس کے برابر ہو گی‘ وہ دن ایسا ہو گا کہ مجرم کی خواہش ہو گی کہ اپنا آپ چھڑوانے کے لیے اپنے بیٹے کو پیش کردے یا اپنی بیوی اور اپنے بھائی کو پیش کردے یا زمین میں جو کچھ ہے‘ اس کو بطور فدیہ دے دے ۔اس دن جو لوگ عذاب سے بچیں گے ان کے اوصاف بھی اللہ تعالیٰ نے بیان فرمادیے ہیں۔ یہ وہ لوگ ہوں گے ‘جو اپنی پاکدامنی کا تحفظ کرنے والے ہوں گے۔یہ لوگ امانتوں اور وعدوں کی پاسداری کرنے والے ہوں گے‘ یہ لوگ حق کی گواہی پر قائم رہنے والے ہوں گے اور نماز کی حفاظت کرنے والے ہوں گے اور یہ لوگ جنتوں کے حقدار ٹھہریں گے۔
سورہ معارج کے بعد سورہ نوح ہے ۔سورہ نوح میں اللہ تعالیٰ نے جناب نوح کی دین کے لیے محنت کا ذکر کیا کہ جناب نوح ساڑھے نو سوبرس تک اپنی قوم کے لوگوں کو توحید کی دعوت دیتے رہے انہوں نے صبح و شام پوری تندہی سے اللہ تعالیٰ کے دین کی خدمت کی اور اپنی قوم کے لوگوں کو یہ بات سمجھائی کہ وہ پروردگار سے استغفار کیا کریں اس کا نتیجہ یہ نکلے گا کہ اللہ تعالیٰ بارشوں کو ان کی مرضی کے مطابق نازل فرمائے گا اور مال اور بیٹوں میں بھی اضافہ کرے گا اور ان کے لیے نہروں کو چلا دیں گے ۔اور باغات کو آباد کر دیں گے ۔
سورہ نوح کے بعد سورہ جن ہے ۔سورہ جن میں اللہ تعالیٰ نے جنات کی ایک جماعت کے قبول اسلام کا ذکر کیا کہ انہوں نے قرآن کی تلاوت کو سنا تو کہنے لگے کہ قرآن کیا خوبصورت کلام ہے ‘ہدایت کی طرف رہنمائی کرتا ہے‘ پس ہم اس پر ایمان لاتے ہیں اور ہم اپنے پروردگار کے ساتھ شرک نہیں کریں گے ۔انہوں نے کہا کہ پروردگار کا مقام بہت بلند ہے ‘نہ اس کی کوئی بیوی ہے اور نہ ہی کوئی بیٹا ۔انہوں نے قرآن مجید کے نزول کے بعد اپنی قوم کے لوگوں کو بھی توحید کی دعوت دی؛ چنانچہ انسانوں کی طرح جنات کی بھی ایک جماعت اہل توحید میں شامل ہو گئی۔ سورہ جن کے بعد سورہ مزمل ہے ۔سورہ مزمل میں اللہ تبارک وتعالیٰ نے اپنے حبیبؐ کو کہاہے کہ وہ پوری رات عبادت نہ کیا کریں‘ بلکہ نصف رات اس سے کچھ زیادہ یا کم عبادت کیا کریں۔ اس لیے کہ انہوں نے دن کو بھی بہت سے کام انجام دینے ہوتے ہیں اوراللہ تعالیٰ کا نام وقفے وقفے سے لیتے رہا کریں ۔رسول اللہ ﷺ اللہ کی محبت کے سبب عبادت میں بہت زیادہ محو ہو گئے تو اللہ نے پیار سے اپنے حبیب کو بتلایا کہ آپ پر اپنی جان‘ اہل و عیال اور سماج کا بھی حق ہے۔ اس سورت میں اللہ تعالیٰ نے یہ بھی بتلایاکہ قرآن جس حد تک ممکن ہو ضرورپڑھنا چاہیے ۔
سورت مزمل کے بعد سورہ مدثر ہے ۔ اس سورت میں اللہ تعالیٰ نے ان لوگوں کے انجام بد کا ذکر کیا جو قرآن مجید کو غرور کی وجہ سے جھٹلاتے ہیں ۔ان کو جہنم کا مزا چکھنا پڑے گا اس سورت میں اللہ تعالیٰ نے جہنم کے پہریدار فرشتوں کی تعدادانیس بتلائی ہے اور جہنم میں لے کر جانے والے بڑے بڑے گناہوں میں‘ نمازمیں کوتاہی اور مساکین کو کھانا نہ کھلا نے کابھی ذکر کیا ہے ۔
اس کے بعد سورۃ القیامہ ہے ۔جس میں اللہ تعالیٰ نے قیامت کی گھڑیوں کا ذکر کیا کہ یقینا قیامت آئے گی اور کافر جو اللہ کے بارے میں یہ گمان کرتا ہے کہ وہ ہڈیوں کو دوبارہ کیسے بنائے گا‘ تو اللہ تبارک و تعالیٰ فرماتے ہیں کہ ہمارے لیے انگلیوں کے پوروں کو بھی دوبارہ ٹھیک ٹھیک پیدا کرنا مشکل نہیں ہے۔
اس کے بعد سورہ دھرہے ۔ اس میں اللہ تعالی فرماتے ہیں کہ انسان پرایک دورایساتھا‘جب وہ کوئی قابل ذکر چیز نہیں تھا۔ اللہ تعالی نے پانی کے قطرے سے اسے دیکھنے اورسننے والابنادیا۔اس کودوراہیں بھی بتلادیں‘چاہے شکرکرے یاانکارکرے ۔ اللہ تبارک و تعالی فرماتے ہیں کہ بیشک ہم نے کافروں کے لیے زنجیریں ‘طوق اورلپکتی ہوئی آگ کوتیارکیاہے ۔جب کہ نیک لوگ جنت میں جائیں گے‘ جہاں ان کو ان گنت نعمتیں حاصل ہونگی ۔
ا س کے بعد سورہ مرسلات ہے اوراس سورت میں اللہ تعالی نے متعدد مرتبہ قیامت کوجھٹلانے والوں کے لیے تباہی کادن قراردیاہے اورکامیابی وکامرانی کواہل تقویٰ کامقدرقراردیاہے ۔ اللہ تعالیٰ سے دعاہے کہ وہ ہمیں قرآن مجید میں مذکورمضامین اورحقائق سے نصیحت حاصل کرنے کی توفیق دے ۔( آمین )

 

Create an account or login to comment

You must be a member in order to leave a comment

Create account

Create an account on our community. It's easy!

Log in

Already have an account? Log in here.

Similar threads

intelligent086
Replies
1
Views
20
intelligent086
intelligent086
intelligent086
Replies
1
Views
18
intelligent086
intelligent086
intelligent086
Replies
3
Views
40
intelligent086
intelligent086
intelligent086
Replies
1
Views
18
intelligent086
intelligent086
intelligent086
Replies
1
Views
32
intelligent086
intelligent086
Top