Pakistan Air Crash History

intelligent086

intelligent086

Star Pakistani
7,471
14,543
981
فضائی حادثوں کی تاریخ .... تحریر : احمد نجیب

Fizai.jpg


وطن عزیز میں فضائی حادثات کی ایک لمبی تاریخ ہے اور اس میں سویلین اور فوجی طیارے دونوں شامل ہیں۔ ذیل میں ہم ملک میں فضائی حادثات کی تاریخ کا جائزہ لیں گے۔ریکارڈ آفس کے مطابق آج تک پی آئی اے کو طیاروں کو چھوٹے بڑے 21 حادثات پیش آئے جبکہ ویب سائٹ کے مطابق پاکستان ایئر فورس کے طیاروں کو مجموعی طور پر 24 حادثے پیش آئے ۔ 2020ء کا پہلا فضائی حادثہ7 جنوری کو اس وقت پیش آیا جب پاک فضائیہ کا ایک طیارہ معمول کی پرواز کے دوران پنجاب کے شہر میانوالی کے قریب گِر کر تباہ ہوا تھا۔ اس حادثے میں طیارے پر سوار دونوں پائلٹس شہیدہو ئے۔اسی طرح 11 مارچ 2020ء کو پاک فضائیہ کا ایک ایف 16 طیارہ وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں شکرپڑیاں کے قریب گِر کر تباہ ہوا ۔یہ ایف 16 طیارہ 23 مارچ کو ہونیوالی یومِ پاکستان پریڈ کی مناسبت سے ریہرسل میں مصروف تھا۔ اس حادثے میں طیارے پر سوار پائلٹ شہید ہوا۔2019ء میں بڑا فضائی حادثہ 30 جولائی کو پیش آیا جب آرمی ایوی ایشن کا ایک چھوٹا طیارہ راولپنڈی کی حدود میں گر کر تباہ ہو اجس کے نتیجے میں5 فوجیوں سمیت کم از کم 19 افراد جاں بحق ہوئے۔حادثے کا شکار ہونے والا طیارہ پاک فوج کا بیچ کرافٹ سی کنگ 350 طیارہ تھا جو دو پروں والے ٹربو پراپ طیارہ ہے ۔ دنیا بھر میں مختلف ممالک کی افواج یہ طیارے استعمال کرتی ہیں۔2019ء کا یہ دوسرا حادثہ ہے، پہلا حادثہ جنوری میں بلوچستان کے علاقے مستونگ کے مقام پر ہوا تھا۔ اس حادثے میں پاک فضائیہ کا ایف سیون پی جی گر کر تباہ ہوا۔یاد رہے کہ فوجی طیارے ایف سیون پی جی کو 2002ء میں پاک فضائیہ میں ایف سکس طیارے کے بعد متعارف کرایا گیا تھا۔ اب تک 9 سے 10 ایسے طیارے حادثات کا شکار ہو چکے ہیں لیکن فضائی ماہرین کا خیال ہے کہ یہ حادثات نارمل حدود میں ہیں۔

فروری 2017ء میں فیصل آباد کے مقام پر شاہین ایئر فلائنگ ٹریننگ سکول کا طیارہ حادثے کا شکار ہوا جس میں دونوں پائلٹ ہلاک ہو گئے تھے۔مئی 2017 ء میں پاک فضائیہ کا ایک جنگی طیارہ معمول کی تربیتی پرواز کے دوران میانوالی کے مقام پر گر کر تباہ ہوا جس میں طیارے کا پائلٹ شہید ہوا۔ طیارہ سبزہ زار علاقے کے قریب تباہ ہوا جس کی وجہ طیارے میں تکنیکی خرابی بتائی گئی۔اگست 2017 ء میں سرگودھا کے مقام پر پاک فضائیہ کا طیارہ تباہ ہوا تاہم اس حادثے میں پائلٹ طیارے سے بحفاظت باہر نکلنے میں کامیاب ہو گئے تھے۔دسمبر 2016 ء میں صوبہ خیبر پختونخوا کے شہر چترال سے اسلام آباد آنے والا پی آئی اے کا ایک جہاز حویلیاں کے قریب گر کر تباہ ہو گیا تھاجس میںمیں 42 مسافر اور عملے کے 5 اراکین سوار تھے۔

۔20 اپریل 2012ء کو نجی ایئر لائن بھوجا ایئر کی پرواز لوئی بھیر کے قریب گر کر تباہ ہوئی تھی، اس میں 127 افراد سوار تھے۔28 نومبر 2010 ء کو ایک چھوٹا طیارہ کراچی کے قریب گر کر تباہ ہوا تھا اور اس حادثے میں 12 قیمتی جانوں کا نقصان ہوا تھا۔ملکی فضائی تاریخ کا سب سے جان لیوا حادثہ بھی اسلام آباد کے قریب 28 جولائی 2010ء کو پیش آیا تھا جب نجی ایئر لائن ایئر بلیو کی پرواز مارگلہ کی پہاڑیوں سے جا ٹکرائی تھی۔ اس طیارے میں 152 افراد سوار تھے۔اس سے قبل 10 جولائی 2006ء کو پی آئی اے کا فوکر طیارہ ملتان ایئر پورٹ سے اڑان بھرنے کے کچھ دیر بعد ہی گر کر تباہ ہو گیا تھااْس میں 45 افراد ہلاک ہوئے جن میں ہائیکورٹ کے 2 جج، فوج کے 2 بریگیڈیئیر اور بہاؤ الدین زکریا یونیورسٹی کے وائس چانسلر بھی شامل تھے۔

پی آئی اے کو 11 حادثے اندرونِ ملک ہی پیش آئے جن میں سے 5حادثے فوکر طیاروں کے تھے۔2006ء میں ملتان کا فوکر طیارے کا حادثہ پی آئی اے کی تاریخ کا اندرونِ ملک سب سے جان لیوا حادثہ تھا جس کے بعد فوکر طیاروں کا استعمال بند کر دیا گیا تھا۔ملک میں اب تک فوجی مسافر طیاروں کے10 حادثے پیش آئے ہیں۔آخری حادثہ پاکستان ایئر فورس کے فوکر طیارے کا تھا جو 20 فروری 2003ء کو پیش آیا۔ کوہاٹ کے قریب گر کر تباہ ہونے والے اس طیارے میں اس وقت کے پاکستانی فضائیہ کے سربراہ ایئر چیف مارشل مصحف علی میر سمیت 17 افسران شہید ہوئے تھے۔

پاک فضائیہ کیلئے اب تک مال بردار طیارے ہرکولیس سی ون تھرٹی سب سے زیادہ جان لیوا ثابت ہوئے ہیں جن میں خصوصی کیپسول رکھ کر مسافروں کیلئے استعمال کیا جاتا رہا ہے۔ہرکولیس سی ون تھرٹی کے 4 حادثوں میں سے 17 اگست 1988ء کو بہاولپور کے قریب پیش آنے والا حادثہ قابلِ ذکر ہے جو اس وقت کے صدر ضیا ء الحق سمیت 30 اہم شخصیات اور فوجی افسران کی شہادت کا سبب بنا۔پاک سرزمین پر 63 برسوں میں غیر ملکی ہوائی کمپنیوں کے9 فوجی اور غیر فوجی مسافر بردار طیاروں کو حادثے پیش آئے۔ان میں سے 3 حادثوں میں افغانستان کے مسافر بردار طیارے گر کر تباہ ہوئے۔ 13 جنوری 1998ء کو افغان ہوائی کمپنی آریانا ایئر کا مسافر طیارہ خوڑک پہاڑی سلسلے میں توبہ اچکزئی کے علاقے میں گرا۔ اس حادثے میں 51 مسافر ہلاک ہوئے اور یہ 28 جولائی 2010ء سے پہلے تک پاک سرزمین پر سب سے زیادہ جان لیوا فضائی حادثہ تھا۔

۔9 جنوری 2002ء کو امریکی ایئر فورس کا ہرکولیس سی ون تھرٹی بلوچستان کی شمسی ائر بیس کے قریب گر کر تباہ ہوا اور 7 مسافروں کی موت کا سبب بنا۔ یہ پاکستان میں کسی غیر ملکی طیارے کا آخری حادثہ تھا۔24 فروری 2003ء کو ایدھی ایئر ایمبولینس کا سیسنا 402 طیارہ کراچی کے قریب 8 مسافروں کی موت کا سبب بنا۔
یہ بھی پڑھیں
 

Muhammad Farooq Sadiq

Muhammad Farooq Sadiq

Well-Known Pakistani
357
793
116
@intelligent086,
رواں برس میں تین حادثے ہو چکے ہیں، کورونا، ٹڈی دل، بے موسمی برسات
اللہ تعالٰی معاف کر دے
 

Create an account or login to comment

You must be a member in order to leave a comment

Create account

Create an account on our community. It's easy!

Log in

Already have an account? Log in here.

Similar threads

Pakistan.web.pk
  • Pakistan.web.pk
  • 0
  • 14
Replies
0
Views
14
Pakistan.web.pk
Pakistan.web.pk
Saad Sheikh
Replies
19
Views
354
intelligent086
intelligent086
Saad Sheikh
Replies
0
Views
246
Saad Sheikh
Saad Sheikh
Saad Sheikh
Replies
13
Views
236
Veer
Saad Sheikh
Replies
14
Views
322
Maria Hussain J
Maria Hussain J
Top
AdBlock Detected
Your browser is blocking advertisements. We're strongly asking to disable ad blocker while you're browsing in Pakistan.web.pk. You may not be aware but any visitor supports our site by just viewing and visiting ads.

آپ کے ویب براؤزر میں ایڈ بلاکر انسٹال ہے، مہربانی کرکے اسے پاکستان ویب پر ڈس ایبل رکھیں ۔ شاید آپ کو معلوم نہ ہو مگر سپانسر اشتہارات کو دیکھ کر ہی آپ پاکستان ویب کو سپورٹ کرتے ہیں۔ سپانسر اشتہارات سے ویب سائٹ کے اخراجات ادا کرنے میں تھوڑی سی ہی سہی مگر مدد ملتی ہے، اس لئے ابھی اپنے براؤزر کی آپشنز میں جاکر ایڈ بلاکر بند کر دیں، شکریہ

I've Disabled AdBlock    No Thanks