Ghazal Shehar ky dukaan daaro...

Discussion in 'Urdu Ghazal, Nazm & Ashaar' at Pakistan.web.pk started by Semmi, Sep 13, 2018.

  1. Semmi
    4

    Semmi Well-Known Pakistani I Love Reading

    شہر کے دوکاندارو ۔ کاروبارِ اُلفت میں
    سود کیا، زیاں کیا ہے ۔ تم نہ جان پاؤ گے.
    دل کے دام کتنے ہیں ۔ خواب کتنے مہنگے ہیں
    اور نقدِ جاں کیا ہے ۔ تم نہ جان پاؤ گے.
    کوئی کیسے ملتا ہے ۔ پھول کیسے کھلتا ہے
    آنکھ کیسے جُھکتی ہے - سانس کیسے رُکتی ہے.
    کیسے رِه نکلتی ہے ۔ کیسے بات چلتی ہے
    شوق کی زباں کیا ہے ۔ تم نہ جان پاؤ گے.
    وصل کا سکوں کیا ہے ۔ ہجر کا جنوں کیا ہے
    حُسن کا فسُوں کیا ہے ۔ عشق کے درُوں کیا ہے.
    تم مریضِ دانائی ۔ مصلحت کے شیدائی
    راہِ گمراہاں کیا ہے ۔ تم نہ جان پاؤ گے.
    زخم کیسے پھلتے ہیں ۔ داغ کیسے جلتے ہیں
    درد کیسے ہوتا ہے ۔ کوئی کیسے روتا ہے
    اشک کیا ہیں، نالے کیا ۔ دشت کیا ہیں، چھالے کیا
    آہ کیا، فُغاں کیا ہے ۔ تم نہ جان پاؤ گے.
    جانتا ہوں میں تم کو ۔ ذوقِ شاعری بھی ہے
    شخصیت سجانے میں ۔ اِک یہ ماہری بھی ہے
    پھر بھی حرف چُنتے ہو ۔ صرف لفظ سُنتے ہو
    اِن کے درمیاں کیا ہے ۔ تم نہ جان پاؤ گے...
    ا​

    Habib jalib
     
    Mishaikh likes this.
  2. Semmi
    4

    Semmi Well-Known Pakistani I Love Reading

Loading...