1. عجلت میں دن گزار کے یوں شب کے ہو گئے
    مٹی پہ خود کو پھینک دیا اور سو گئے
    دونوں کو مار دے گا یہ مشترکہ المیہ
    مجبور بھی نہیں تھے مگر دور ہو گئے​

    وہ لوگ ہائے آنکھ کی بینائ جیسے لوگ
    پل بھر کو میرے ہاتھ لگے اور کھو گئے​

    ممکن ہے تیری نسل بھی مقروض غم رہے
    گریہ گزار تیرے تجھے اتنا رو گئے​

    میں نے ہوا کو صرف ترا واسطہ دیا
    جھونکے مرے چراغ کے پہلو میں سو گئے

    @Recently Active Users
     
    Tags:
    Ellaf khan, Ajwah and Mishaikh like this.
  2. Ellaf khan
    5

    Ellaf khan Well-Known Pakistani I Love Reading

    @Falak
    VERy nice........thank u for sharing......
     
    Falak likes this.
Loading...